Poetry

مارا دیا گیا مجھے بے یار و مددگار اس دیارِ غیر میں
اپنی صرف تھی گولی جو بھیجی تھی میرے ہی نگہدار نے

بتا کہ میں اپنا لہو کس کے ہاتھوں پر تلاش کروں
غیروں میں یا پردے میں چھپے اپنوں میں تلاش کروں

نہ صرف دربدر کر دیا گیا مجھ کو اپنی سر زمین سے
زمین ہی تنگ کردی میرے لیے میرے اپنے حفیظ نے

قصور کیا تھا میرا جو یہ سلوک روا رکھا گیا مجھ سے
محض یہ کہ سچا پیار کیا تھا میں نے اپنے وطن سے

شہرِنابینا میں بیناٸی بانٹنا میرا نہ پسند آیا اس کو
میرے جان و مال کی حفاظت کرنا تھی جسکو

مجھ کو اور میری آواز کو تابوت میں بند کرنے والو
ملوں گا اک بار پھر تم سے میدانِ حشر میں، یہ جان لو

Leave a Reply

Poetry

You Might Like This

Poetry

نہ جانے روٹھ کے بیٹھا ہے دل کا چین کہاںملے...

Read More

Poetry

بعد اُس کے غمِ ہجر میں, شریکِ غم کوئی نا...

Read More

Poetry

آنکھ میں آنکھ ڈال دیکھا ہےمیں نے سارا جمال دیکھا...

Read More
funny jokes

Funny joke

سردار جی کا نہایت خطرناک آپریشن ہونا تھا جب انہیں...

Read More